شام میں اب تک ایک ہزار بچے مارے جا چکے ہیں: یونیسف

07 مارچ 2018 (19:57)


جنیوا:اقوام متحدہ کے ادارے یونیسف کے ترجمان کرسٹوفی بولائیرک نے کہا ہے کہ شام میں جاری لڑائی میں رواں سال اب تک کم سے کم ایک ہزار بچے مارے جاچکے ہیں ۔


اپنے ایک بیان میں ترجمان یونسیف کرسٹوفی بولائیرک نے کہا کہ شامی فوج کے محاصرے کا شکار مشرقی الغوطہ میں لوگ اپنی جانیں بچانے کے لیے زیر زمین پناہ گاہوں میں رہ رہے ہیں ۔اس علاقے میںمیں 4 لاکھ افراد مقیم ہیں اورانہیں شدید بحران کا سامنا ہے،تاہم شامی حکومت ان تک امدادی سامان پہنچانے کی اجازت نہیں دے رہی ہے اور اس کی فوج نے مختلف علاقوں پر گولہ باری اور فضائی حملے جاری رکھے ہوئے ہیں ۔

مزیدخبریں