Image Source : G

ابو ظہبی کے ولی عہد کا دورہ پاکستان کی نوعیت کیاتھی ؟اہم انکشافات سے پردہ اُٹھ گیا 
07 جنوری 2019 (17:12) 2019-01-07

اسلام آباد :وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ زید النیہان کا دورہ دو فیزز پر تھا ،ان کا جو پہلا دورہ تھا وہ نجی تھا جس میں وہ رحیم یار خان میں رہے تھے ،فوادچوہدری نے اہم ایشو پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ واضح کیا کہ سوشل میڈیا پر رپورٹنگ کرنے والے صحافیوں کو شاید اتنی سمجھ نہیں کہ نجی دورہ اور سٹیٹ کا دورہ میں کیا فرق ہے ۔

زید بن النیہان سے متعلق فواد چوہدری نے بتایا کہ انہوں نے گزشتہ روز خود بھی یہ بتایا تھاکہ وہ 50سال قبل اپنے والد کیساتھ پاکستان تشریف لائے تھے ،ان کا کہنا تھا جن لوگوں نے پاکستان کی تاریخ پڑھی ہے وہ اس بات سے بخوبی واقف ہونگے کہ یو اے ای کی ولی عہد کی پاکستان میں کس حد تک خدمات موجود ہیں ،شیخ زید بن سلطان کا رول پاکستان کے بڑے شہروں میں ہمیشہ سے رہا ہے چاہے وہ رحیم یار خان ہو یا لاہور میں شیخ زید ہسپتال ہو انہوں نے پاکستان میں ہسپتالوں کیلئے بہت بڑے بڑے پراجیکٹس لگائے ہیں ۔ ولی عہد کی والدہ کی بے پناہ چیئریٹیز پاکستان میں اب بھی کام کر رہی ہیں ۔

ولی عہد شیخ محمد بن زید النیہان کے اس دورہ کی اہمیت یہ تھی کہ یہ پہلا سٹیٹ ہیڈ کا خوش آمدید کہنا تھا وزیر اعظم پاکستان جس میں خود سر فہرست تھے ،عمران خان نے انہیں خود ریسیو کیا ،یو اے ای کی طرف سے جو پیکج تھا وہ پہلے ہی اعلان کر دیا گیا تھا،تین بلین ڈالر کا پیکج پہلے ہی اعلان کر دیا گیا تھا ،افغانستان کی موجودہ صورتحال میں یو اے ای کا ایک اہم رول ہے ،فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ یو اے ای سے صرف معاشی نہیں بلکہ ہر سطح پر تعلقات قائم ہیں جن میں سٹریٹجیک تعاون سب سے اہم ہے ،شیخ زید بن النیہان کا جو آخری دن تھا وہ باقاعدہ آفیشل دورہ تھا اس سے قبل جو دن انہوں نے پاکستان میں گزارے وہ ان کا نجی دورہ تھا ۔

نجی ٹی وی کے مطابق ولی عہد شیخ محمد بن زید النیہان 7روز سے پاکستان میں اپنی فیملی کیساتھ موجود تھے ،ذرائع نے بتایا کہ شاہی خاندان کے ارد گرد پہلے ان کی ذاتی سیکیورٹی کا حصار تھا، دوسرے نمبر پر حساس ادارے اور رینجرز کے جوان اور تیسرا حصار مقامی پولیس کا تھا۔ عام چولستانیوں کو یہ علم تھا کہ کوئی شہزادے آئے ہوئے ہیں ، مگر حقیقت میں کراو¿ن پرنس اپنی فیملی سمیت آئے ہوئے تھے ، آج ولی عہد کی فیملی اور ان کا عملہ واپس ابوظہبی روانہ ہوا ہے جبکہ ولی عہد خود اسلام آباد وزیراعظم عمران خان سے ملنے کے بعد واپس اپنے وطن روانہ ہوئے۔


ای پیپر