کسی کو کروڑوں کی بندر بانٹ نہیں کرنے دیں گے :چیف جسٹس ثاقب نثار
07 اپریل 2018 (17:03) 2018-04-07

لاہور: چیف جسٹس پاکستان نے ڈاکٹر کے شلوار قمیض پہن کر آپریشن کرنے کا نوٹس لے لیااور دوران سماعت مشیر صحت سلمان رفیق کو تصویر دکھانے کیلئے اپنا موبائل دے دیا۔تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں بنچ نے ہسپتالوں کے فضلے سے متعلق ازخودنوٹس کی سماعت کی ، دوران سماعت سلمان رفیق نے کہا کہ یہ میرے ماتحت نہیںچیف جسٹس نے استفسار کیا کہ پھر آپ کس چیز کے وزیر ہیں؟،ایک وزیر کے پرسنل سیکرٹری کو بھی3 لاکھ میں لگا دیا۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ سلمان رفیق صاحب !آپ وزیراعلی سے بات کرینگے یا ہم بلالیں ،ملک میں بادشاہت نہیں ہے،ہم پنجاب سمیت ملک بھر میں یہ برداشت نہیںکریں گے اور کسی کو کروڑوں کی بندر بانٹ نہیں کرنے دیں گے مشیر صحت نے کہا کہ میں نے صحت پر بہت کام کیا ہے ،اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ خواجہ صاحب اپنی کارکردگی تو بتائیں ۔

سلمان رفیق نے کہا کہ آپ ناراض ہونگے تو کیسے بتاپا ﺅں گایہ میری بھی عدالت ہے،مشیر صحت نے کہا کہ میں نے محنت کی ہے کیونکہ مجھے اپنے والد کے نام کا خیال ہے چیف جسٹس نے مشیر صحت سے استفسار کیا کہ ریلوے کے لاسز آپ جاتنے ہیں کتنے ہیں؟،ریلوے کے افسر نے کھڑے ہو کر بتایا کہ ریلوے کے لاسز 60 ارب روپے ہیںسلمان رفیق نے کہا کہ اکیلے کچھ نہیں کر سکتے سب اداروں کی سپورٹ چاہئے ، چیف جسٹس نے کہا کہ ہم نے کیس شروع کئے ہیں توبہتری آنے لگی ہے عدالت نے ہیلتھ کیئر کمیشن اور وائی ڈی اے کے نمائندوں سے بھی جواب مانگ لیا۔


ای پیپر