سانحہ بلدیہ ٹائون پر فاروق ستار اور حلیم عادل میں تلخی
06 جولائی 2020 (17:00) 2020-07-06

اسلام آباد:رہنما تحریک انصاف سندھ حلیم عادل شیخ اور سابق کنونیئر ایم کیو ایم ڈاکٹر فاروق ستار کے درمیان بلدیہ ٹائون فیکٹری آتشزدگی کیس رپورٹ پر شدید تلخ کلامی ہو گئی‘ ایم کیو ایم کے سابق کنونیئر کا کہنا تھا کہ شوگر اور فلور ملز سکینڈل آنے کے بعد یہ سب کام ہوتا ہے ‘ مقدمہ درج کرنا الگ بات ہے لیکن ایسے اقدام سفاکی ہے ‘ عدالت نے بلایا تو ضرور جائوں گا جبکہ تحریک انصاف کے رہنما کا کہنا تھا کہ پورے شہر کو مروا کر اب لوگ ٹی وی پر بھاشن دیتے ہیں ‘ میرے بچے مر گئے ہیں مجھے صبر نہیں ہے۔

 سابق کنونیئر ایم کیو ایم ڈاکٹر فاروق ستار نے بلدیہ ٹائون فیکٹری آتشزدگی زدگی کیس کی جوائنٹ انوسٹی گیشن رپورٹ پبلک ہونے پر اپنے ردعمل میں کہا کہ اگر مجھے کیس کے سلسلے میں عدالت بلایا جائے تو ضرور جائوں گا اور جس کے ساتھ کام کیا وہ ایسے عمل میں ملوث نہیں ہے۔ سانحہ بلدیہ ٹائون کو نثار مورائی اور عزیر بلوچ سے کیوں جوڑا گیا جبکہ بھتہ مانگنا الگ معاملہ ہے اور نہ دینے پر ایسا عمل کرنا سفاکی ہے۔

ایک انٹرویو میں تحریک انصاف سندھ کے رہنما حلیم عادل شیخ نے فاروق ستار کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ ہم پر آپ کی طرح بلدیہ سکینڈل نہیں ہے۔ عوام کو بتایا جائے کہ کے الیکٹرک سے بھتے کون لیتا تھا۔ پورے شہر کو مروا کر آپ یہاں بھاشن دے رہے ہیں ۔میرے بچے مارے گئے ہیں مجھے صبر نہیں ہے۔ 4 سال میں متاثرین کو کسی نے نہیں پوچھا ۔ جے آئی ٹی رپورٹس دیکھیں تو رونا آ گیا۔ کراچی شہر میں لوگ بھتے پر مارے گئے جبکہ کچھ لوگ سفید پکڑے پہن کر بیٹھے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہمیں پتہ نہیں ہے ۔ فاروق ستارقاتلوں کو سولی پر لٹکانے کی بات کرتے ہیں تو ساتھ ہیں۔


ای پیپر