United States, Iran, uranium, enrichment program, nuclear extortion, campaign
05 جنوری 2021 (14:05) 2021-01-05

نیویارک: ایران نے فاردو پلانٹ پر 20 فیصد یورینیم افزودہ کرنا شروع کر دی، امریکا نے ایران کے اعلان کو جوہری بھتہ خوری مہم قرار دیدیا۔

ترجمان امریکی محکمہ خارجہ کا کہنا ہے کہ ایران کی یہ کوشش ناکام رہے گی ، ترجمان نے امید ظاہر کی کہ آئی اے ای اے ایسی کوئی بھی نئی ایٹمی سرگرمی ضرور رپورٹ کرے گی۔

ادھر اسرائیلی وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ ایران کی یورینیم افزودگی کا مقصد جوہری ہتھیار تیار کرنا ہے۔

واضح رہے کہ ایران نے اقوام متحدہ کے تحت جوہری توانائی کے عالمی ادارے آئی اے ای اے کو مطلح کیا تھا کہ وہ یورینیم کو 20 فی صد تک افزودہ کرنا چاہتا ہے۔

یہ اقدام صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کے گزشتہ دنوں میں ایران اور امریکہ کے مابین سخت کشیدگی کے دوران سامنے آیا ہے، جنہوں نے یکطرفہ طور پر امریکہ کو تہران کے جوہری معاہدے سے 2018 میں دستبردار کر دیا تھا۔

واضح رہے کہ ایران نے مئی 2019 میں جوہری سمجھوتے کی بعض شرائط پر عمل درآمد نہ کرنے کا اعلان کیا تھا اور اس نے یہ فیصلہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے جوہری سمجھوتے سے یک طرفہ طور پر دستبرداری کے فیصلے سے ایک سال بعد کیا تھا۔

ایران نے دسمبر کے اوائل میں قانون سازی کے ذریعے یورینیم کو افزودہ کرنے کے لیے اضافی اور جدید سینٹری فیوجز مشینیں نصب کرنے کا اعلان کیا تھا۔ اس کے نتیجے میں اس کے جوہری پروگرام کو وسعت دی جا سکے گی۔

بعض ذرائع ابلاغ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ ایران کی طرف سے خطے میں امریکی اور اسرائیلی مفادات پر حملہ ہو سکتا ہے۔

ایران اس وقت سخت غصے میں ہے کیونکہ گزشتہ ماہ چوٹی کے جوہری سائنسدان محسن فخری زادہ کے قتل کے بعد امریکا کے ساتھ تہران کی کشیدگی بڑھ گئی ہے۔

اس کے علاوہ کمانڈر قاسم سلیمانی کے قتل کی پہلی برسی کے موقعے پر دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوا۔


ای پیپر