مسئلہ کشمیر پر حالیہ پیش رفت ،ٹرمپ کارڈ یا ٹریپ تھا ؟شہباز شریف
05 اگست 2019 (18:28) 2019-08-05

لاہور:پاکستان مسلم لیگ (ن) نے بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے اقدام کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ عالمی دنیا اور اسلامی ممالک اس کا نوٹس لیں اور اس فیصلے کو واپس کرانے کےلئے بھارت پر سفارتی دباﺅ ڈالا جائے ،پاکستانی حکومت دنیا کو اس معاملے پر صحیح حقائق سے آگاہ کرنے کیلئے فی الفور اعلیٰ سطحی وفود کو روانہ کرے ، کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کرنے والے ڈونلڈ ٹرمپ کا بھی امتحان ہے اور اب دیکھنا ہے کہ ٹرمپ نے ذاتی ایجنڈے کیلئے توثالثی کی پیشکش نہیں کی ،یہ ٹرمپ کارڈتھا یا ٹریپ ؟۔

یہ کسی فرد کی ذات کا مسئلہ نہیں بلکہ ایک کاز ہے اور ہم دل کی اتھاہ گہرائیوں سے حکومت کو اتحاد کے ساتھ مضبوط موقف سامنے لانے کی پیشکش کر رہے ہیں اس لئے عمران نیازی صاحب این آر او کا طعنہ نہ دینا ، پاکستان کی مسلح افو ا ج بھارت کی کسی بھی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کی صلاحیت رکھتی ہیں اور اگر کسی نے پاکستان کی جانب میلی آنکھ سے دیکھا تو اس آنکھ کو باہر نکال کر روند دیا جائے گا ۔ ان خیالات کا اظہار مسلم لیگ (ن) کے صدر محمد شہباز شریف نے مرکزی سیکرٹری اطلاعات مریم اورنگزیب اورپنجاب کی سیکرٹری اطلاعات عظمیٰ بخاری کے ہمراہ رماڈل ٹاﺅن سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا ۔

شہباز شریف نے کہا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرنے کاگھٹیااقدام کیا ہے اور پورا پاکستان اس کی شدید ترین الفاظ میں مذمت کرتا ہے ۔

یہ انتہائی گری ہوئی حرکت اور سلامتی کونسل اور اقوام متحدہ کی قراردادوں سے بغاوت ہے ،نریندر مودی نے مہذب دنیا کے ساتھ کی گئی کمٹمنٹ کوبھی توڑا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نریندر مودی سے یہ امید کرنا کہ وہ انتخابات جیت کر کشمیر کا مسئلہ حل کردے گا بچگانہ سوچ تھی۔ یہ وہی نریندر مودی ہے جس نے 2002ءمیں گجرات میں مسلمانوں کاقتل عام کیا ،کشمیریوں پر ظلم وستم ڈھایاجارہاہے اوربے گناہوں کا خون بہایا جارہاہے۔

کشمیریوں کو کلسٹر بم سے شہید اور زخمی کیاگیا ،آج قوم مہذب دنیا اورسلامتی کونسل سے مطالبہ کررہی ہے کہ کشمیر پر قراردادوں جو حق خود ارادیت کےلئے کی گئی اس کی جو دھجیاں کی گئیں اور خلاف ورزی کی گئی اس کا نوٹس لیا جائے ۔


ای پیپر