امریکہ عمران نیازی سے اسرائیل تسلیم کروانا چاہتا ہے : حافظ حسین احمد
03 ستمبر 2019 (20:01) 2019-09-03

کوئٹہ:جمعیت علمائے اسلام کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات حافظ حسین احمدنے کہا ہے کہ امریکہ عمران نیازی سے اپنے بغل بچہ ناجائز یہودی ریاست اسرائیل کوتسلیم کروانا چاہتا ہے، اس طرح واحد اسلامی ایٹمی ملک پاکستان پر مصر کی طرح معاشی دباؤ ڈال کر اسرائیل کو مزید محفوظ بنانے کی کوشش کررہاہے ۔

ایک انٹرویو میں انہوں نے کہاکہ عمران خان کی امریکی یاترا کے بعد بھارت اوراسرائیل کے حوالے سے پاکستان کو گھیرے میں لینے کا فیصلہ ہوچکا ہے، اسرائیل کو تسلیم کرنے کی بات سب سے پہلے سابق آرمی چیف جنرل پرویزمشرف نے غیر آئینی طور پر اقتدار میں قبضہ کے بعد شروع کی اب ایک بار پھر مشرف کے دور کی کابینہ جنہوں نے آج عمران خان کو گھیرا ہوا ہے وہ ایک بارپھر اسی مشن پر نکلے ہیںمشرف دورمیں امریکہ کاافغانستان پرحملہ اور جارحیت کی وجہ سے اسرائیل کو تسلیم کرنے کاپلان موخر ہوا، اب جب کہ افغانستان میں سوویت یونین کی طرح امریکہ کی بھی شکست ہوئی ہے۔

حافظ حسین احمد نے کہا کہ اب امریکہ ایک اسرائیل کے بجائے دواسرائیل کا منصوبہ بنا چکا ہے،امریکی منصوبے میں ناجائز ریاست اسرائیل کو پاکستان سے تسلیم کروانا اور کشمیر میں ثالثی کے کی آڑ میں ایک نئی اسرائیل جیسی ریاست کا قیام بھی شامل ہے اور بدقسمتی سے اس وقت مقتدر اور غیر مقتدار حکمران ایک پیج پر نظر آتے ہیں پاکستان اور اسرائیل دونوں مذہبی بنیادوںپر قائم ہوئے تھے پاکستان اسلام کی بنیاد پر جبکہ ناجائز ریاست اسرائیل یہودیت کی بنیاد پر قائم کی گئی، اسرائیل کے پہلے وزیر اعظم نے بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کو اسرائیل کو تسلیم کرنے کی درخواست کی جیسے انہوں نے مسترد کردیا لیکن آج مدینہ کی ریاست کے دعویداردرپردہ یہودی لابی کے لیے سرگرم عمل ہیں جس سے ان خدشات کی تصدیق ہوتی ہے جس کا جے یو آئی نے برملہ انکشاف کیا تھا۔

 انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جب بھی کوئی جنگ کی صورتحال پیداہوتی ہے تو امریکہ اور اسرائیل بھارت کے دائیں بائیں نظر آتے ہیں بلکہ اسرائیلی جنگی جہازوں کے پائلٹ بھی رضاکارانہ طورپراسلام دشمنی کی وجہ سے پاکستان پر حملہ آور ہوتے رہے ہیں اور کئی بار پاکستان کی ایٹمی صلاحیت کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی بھی طشت ازبام ہوچکی ہے۔ اسرائیل کو تسلیم کرنے کے لیے میڈیا اوراخبارات میں ماحول بنایا جارہا ہے جبکہ پارلیمنٹ اورعوام سے رجوع کرنے سے احترازکیا جارہا ہے،پاکستان کے غیور مسلمان عوام فلسطینی مظلوم عوام کے ساتھ تھے ہیں اور ہمیشہ رہیں گے مشرف کے دور میں کشمیریوں کے جدوجہدآزادی پرقدغن لگایا گیا تھا اور اب عمران نیازی فلسطینی مظلوم عوام کے پیٹھ میں چھرا گھونپنا چاہتا ہے۔


ای پیپر