فاتح کون نسل پرست یا لبرل…؟
03 نومبر 2020 (12:55) 2020-11-03

تین نومبر آن پہنچا امریکہ میں صدارتی معرکہ برپا ہو گا لیکن کئی دہائیوں بعد امریکہ عجیب دوراہے پر ہے ایک طرف معیشت زوال کا شکارہے تو دوسری طرف معاشرے میں تقسیم بڑھ رہی ہے  انتخابی مہم کے دوران پیدا ہونے والی تلخی کے تناظر میں نتائج پربھی انگلیاں اٹھنے کا امکان ہے جس کاٹرمپ عندیہ دے چکے ہیں جس سے مبصرین کا خیال ہے کہ موجودہ انتخابی نتائج تنازع کا موجب ہو سکتے ہیں جس سے امریکہ کا عالمی کردار محدود ہو سکتا ہے واحد عالمی سُپر پاور کو پہلے ہی چین کی صورت میں ایک بڑا چیلنج درپیش ہے اگر اندرونِ ملک انتشاروافراتفری میں اضافہ ہوتا ہے تو نئے امریکی صدر کی توجہ خارجی مسائل سے ہٹ سکتی ہے جس سے مدمقابل فریق کو آگے بڑھنے اور پچھاڑنے کا موقع مل سکتا ہے ۔

امریکہ کی عالمی حیثیت کی وجہ سے صدارتی انتخاب پر دنیا بھر کی نظریں ہوتی ہیںاسی بناپر امیدواروںکے مباحثوں میں عالمی مسائل کو اہم حیثیت حاصل رہی ہے لیکن موجودہ صدارتی چنائو میں پہلی بار ٹرمپ اور جو بائیڈن کی زیادہ توجہ صرف اندرونی مسائل پر ہے ٹرمپ نے اسرائیل کو محفوظ بنانے کے لیے کئی ایسے اقدامات کیے ہیں جن کی وجہ سے یہودی لابی خوشی سے حمایت کررہی ہے یو اے ای اور بحرین سے سفارتی مراسم استوار کرانے سمیت ڈیم کی تعمیر پر ایتھوپیا کو ڈانٹنے اور مصر کی حمایت بھی اسرائیلی کوششوں کا نتیجہ ہے چین کے مدمقابل بھارت کو لانے کے لیے دہلی سے تعلقات میں گرمجوشی کی بنا پر بھارتی کمیونٹی بھی کھل کر ٹرمپ کے ساتھ ہے یہودی اور ہندولابی متحرک ہونے سے یہ توقع کر لینا کہ جوبائیڈن کی کامیابی سے امریکی پالیسی یکسر تبدیل ہوجائے گی درست نہیں کیونکہ جوبائیڈن مشرقِ وسطیٰ میں دور یاستی حل کی حمایت ضرور کرتے ہیں لیکن ایسا کیسے ممکن ہوگا طریقہ کاربتانے سے قاصر ہیں؟ بھارت نے جب پہلی بار ایٹمی دھماکوں کیے جس کی پاداش میں پابندیاں لگانے کی بات ہوئی تو جوبائیڈن نے بطور سینیٹر بھارت کے حق میں ووٹ دیا اِس لیے صدر کوئی بھی منتخب ہوامریکی پالیسی میں بڑی تبدیلی کا امکان کم ہے ۔

انتخابی مہم اور مباحثوں کے دوران ٹرمپ اور جوبائیڈن نے ایک دوسرے پر تابڑ توڑ حملے کیے جن کے دوران پالیسیوں کے ساتھ ذاتیات پرتنقید ہوتی رہی یہ تلخی امیدواروں تک محدود نہیں رہی بلکہ امریکی معاشرے میں بھی سرایت کرتی جارہی ہے سیاہ فام نسلی تعصب ختم کرنے اور جارج فلائیڈ سمیت دیگر بے گناہوں کے بارے انصاف کے تقاضے پورے کرنے کی احتجاجی مہم چلارہے ہیں تو سفید فام بھی 

مقابلے پر منظم ہورہے ہیںاس نسلی تعصب و مخاصمت کے خطرے میں مستقبل قریب میں کمی کے آثار نظر نہیں آتے طرفہ تماشہ یہ کہ ٹرمپ کھل کر سفید فاموں کی حمایت کر رہے ہیں جبکہ جوبائیڈن سیاہ فاموں کے ساتھ کھڑے نظر آتے ہیں لیکن دونوں امیدوار وں کا مقصد انصاف  نہیں بلکہ صدارتی انتخاب میں فائدہ اُٹھانا ہے لاطینی ،ایشیائی اور افریقی نژاد کو معاشی ،معاشرتی اور سماجی حوالے سے برابری کے حقوق دلانے کی بات حمایت حاصل کرنے کے سواکچھ نہیں اِس کا نتیجہ یہ نکلا ہے کہ جوبائیڈن کو ٹرمپ پر جائزوں میں برتری حاصل ہوئی ہے لیکن بظاہر خلوص جتانے کے باوجود وائٹ ہائوس میں چہرے کی تبدیلی سے صورتحال تبدیل ہونے کے بجائے جوں کے توں رہنے کا امکان ہے۔

ٹرمپ کے چار سالہ دور میں بظاہر عالمی تنازعات میں امریکی مداخلت کم کرنے کی کوششیں ہوئیں لیکن امریکی مفادات کولاحق خطرات میں کمی نہیں ہوئی افغانستان اور مشرقِ وسطیٰ میں لیبیا،یمن،شام ،فلسطین اور عراق کے حوالے سے امریکی پالیسیوں میں یکسوئی کا فقدان ہے ایران سے تنائو میں بھی کمی نہیں ہوئی بلکہ امن پسندی کے بجائے ٹرمپ کی بطور اسلحہ تاجر پہچان بنی ہے لیکن جو بائیڈن کے پاس بھی مذکورہ مسائل کے حل کا کوئی فارمولا نہیں اگر ہوتا تو شخصی الزام تراشی کے ساتھ اپنے نکتہ نظر کا اظہار کرتے مگر دوریاستوں کی بات کرنے سے آگے نہیںبڑھے علاوہ ازیں نیٹو پر بھی امریکی گرفت کمزور ہوئی ہے اِس حوالے سے ترکی سمیت یورپی ممبران ممالک اور امریکی سوچ میں اختلافات ڈھکا چھپا نہیں رہا جس سے اِس خیال کو تقویت ملنے لگی ہے کہ امریکہ کو اپنی عالمی حیثیت کے دفاع میں دلچسپی نہیں رہی وہ دوبدو مقابلے کی بجائے سازشوں کے ذریعے نفاق کے بیج بونے تک محدود رہنے لگا ہے چین وبھارت۔ترکی و یونان محازآرائی واضح مثال ہے  ۔

آج تین نومبر کو ووٹ پڑنے کے بعد نتائج کا پتہ چل جائے گا لیکن ذہن میں رکھنے والی بات یہ ہے کہ مقابلے پرہیلری کلنٹن جیسی امیدوار نہیں بلکہ جو بائیڈن جیسا امیدوار ہے جن کا کئی دہائیوں سے بطور سینیٹر امریکی اقتدار کے مراکز سے قریبی تعلق ہے جبکہ ڈونلڈ ٹرمپ بھی امیدوار ہونے کے ساتھ چارسالہ صدارت کی مدت گزار چکے ہیں اِس لیے جب مبصرین پرامن انتقال اقتدار کے بارے خدشات کا اظہار کرتے ہیں تو یقین نہ کرنے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی بظاہر جائزوں میں جوبائیڈن اپنے حریف سے آگے ہیں لیکن یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ گزشتہ صدارتی انتخاب میں ہیلری کلنٹن کو بھی برتری حاصل تھی مگر نتائج میں ٹرمپ نے پچھاڑ دیا کیا اب دونوں امیدواروں میں سے کوئی ہلیری کی طرح آسانی سے شکست تسلیم کر لے گا ؟بظاہر اِس کا جواب ہاں میں نہیں دیا جا سکتا کیونکہ ٹرمپ اِس امر کا اظہار کر چکے ہیں کہ اگر وہ صدارتی الیکشن ہار گئے تو نتائج تسلیم نہیں کریں گے ۔

کرونا وبا کے دوران حکمت عملی نے ٹرمپ کی مقبولیت کو متاثر کیا ہے امسال رائے کے اظہار میںپوسٹل بیلٹ کے استعمال میں اضافہ ہوا ہے جس کا توڑ انہوں نے ٹیکسوں میں کمی لاکرکرنے کی کوشش کی جبکہ جو بائیڈن ٹیکسوں میں اضافے کے ذریعے معیشت کوبہتربنانے کی بات کرتے ہیں اب امریکیوں نے یہ فیصلہ کرنا ہے کہ ٹیکس کم کر نے اور کرونا وبا کے دوران تین سو ارب ڈالرکا ریلیف دینے والے نسل پر ست 


ای پیپر