لاہور میں بارش سے ہونے والے نقصان کا ذمہ دار کون ہے : عمران خان
03 جولائی 2018 (22:18) 2018-07-03


کراچی:پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ علاج معالجہ صاف پانی اور روزگار انصاف کی فراہمی ریاست کی ذمہ داری ہے ، 30سال تک باربار باریاں لینے والوں نے کچھ نہیں کیا، کراچی کا سب سے بڑا مسئلہ پانی ہے ، نواز شریف خاندان کے 4 محلات ہیں، سب کو پتہ تھا کہ لندن فلیٹس شریف خاندان کی ملکیت ہیں، لندن فلیٹس چوری کے پیسوں سے خریدے گئے تھے۔


تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عمران خا ن نے کہا کہ عوام کا پیسہ عوام پر خرچ ہونا چاہیے، عوام کی بنیادی ضروریات پوری کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے ، علاج معالجہ صاف پانی اور روزگار انصاف کی فراہمی ریاست کی ذمہ داری ہے ، 30سال تک باربار باریاں لینے والوں نے کچھ نہیں کیا، اس وقت تمام سہولیات امیروں کیلئے ہیں، ہم نے کمزور طبقے کو اوپر اٹھاناہے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف خاندان کے 4 محلات ہیں، سب کو پتہ تھا کہ لندن فلیٹس شریف خاندان کی ملکیت ہیں، لندن فلیٹس چوری کے پیسوں سے خریدے گئے تھے، قوم کو قرضوں میں جکڑ دیا گیا ہے ، کراچی کا سب سے بڑا مسئلہ پانی ہے ۔


مزید برآں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ لاہور کا سالانہ ترقیاتی بجٹ350ارب روپے ہے ، اورنج ٹرین منصوبہ300ارب روپے تک پہنچ گیا ہے جبکہ میٹرو بس منصوبہ 60ارب روپے کا ہے ، پاکستان کی عوام پہلے ہی مقروض ہے ، لاہور میں بارش سے ہونے والے نقصان کا کون ذمہ دار ہے ،شہباز شریف کو بلا کر پوچھا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ حالیہ انتخابات نظریہ کی بنیاد پر ہونے جا رہے ہیں ، میں لیاری میں بلاول بھٹو کے قافلے پر پتھراؤ کی سخت مذمت کرتا ہوں ، ہم ملک میں صاف اور شفاف انتخابات چاہتے ہیں ۔عام انتخابات نظریہ پر ہوں گے ،1970میں نظریاتی الیکشن ہوئے تھے او ر اب الیکشن نظریہ کی بنیاد پر ہوں گے ۔انہوں نے کہا کہ نوازشریف ابھی تک یہ جواب نہیں دے سکے کہ لندن اپارٹمنتس کس کے پیسے پر خریدے گئے ۔ لاہور میں اتنا نقصان ہوا ہے جسے پورا کرنے کیلئے اربوں روپے خرچ ہوں گے ، کراچی اور اسلام آباد میں پانی کا بحران ہے ، 25جولائی کا الیکشن نظریہ کی بنیاد پر ہوگا بڑے بڑے برج الٹ جائیں گے ۔


عمران خان نے کہا کہ بڑے دعوے سنے تھے کہ لاہور کو پیرس بنا دیا گیا ہے ، شہباز شریف ہر جگہ کہتے پھر رہے ہیں کہ وہ کراچی کو لاہور بنا دیں گے، پنجاب میں ساری ترقی اشتہاروں میں ہے ، الیکشن 2018ملک کی تقدیر بدلنے کا موقع ہے ، پنجاب کے 635ارب کے بجٹ میں سے 57فیصد لاہور پر خرچ ہوتا ہے ، میں جا کر دیکھوں گا کہ 57فیصد کا بجٹ لاہور میں کہاں خرچ ہوا ہے ، پیسہ ایمانداری سے خرچ ہوتا تو لاہور کا یہ حال نہ ہوتا، شریف برادران نے قرض لے کر اورنج ٹرین اور میٹرو بنائی، لاہور کو پیرس بنایا جا رہا ہے یا جاتی امراء کو بنایا جا رہا ہے ، عوام کے ٹیکس کے پیسوں سے جاتی امراء میں سڑکیں بنائی گئی ہیں، پاکستان کی آدھی آبادی پڑھ لکھ نہیں سکتی لوگوں کو تعلیم کی ضرورت ہے ، پیرس میں بارش ہوتی ہے تو سڑکیں ڈوبتی نہیں ہیں، جب تک حکمران عوام کا پیسہ ایمانداری سے خرچ نہیں کرتے وہ عوام میں نہیں نکل سکتے،عوام کو اپنی تقدیر بدلنے کا بہترین موقع مل رہا ہے ، ڈرامے تھوڑی دیر کیلئے چلتے ہیں، دن بدن ملک قرضے میں ڈوبتا جا رہا ہے ۔


ای پیپر