امریکی وزیر خارجہ نے پاک فوج کے سپہ سالار کو کیا پیغام دیا
03 جنوری 2020 (23:25) 2020-01-03

واشنگٹن: امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو نے کہا ہے کہ انہوں نے پاکستان کے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ٹیلی فونک گفتگو کی جس دوران انہیںایرانی کمانڈر جنرل قاسم سلیمانی کو ہلاک کرنے کے امریکہ کے دفاعی اقدام کے بارے میں آگاہ کیا، افغان صدر اشرف غنی ، فرانس، جرمنی ،برطانیہ اورچین کے حکام سے بھی رابطے کرکے انہیں امریکی مفادات ، تنصیبات اور امریکی لوگوں کے تحفظ کی خاطر ایرانی جنرل کو ہلاک کرنے کے صدر ٹرمپ کے دفاعی اقدام کے بارے میں اعتماد میں لیا .

ایرانی حکمرانوں کے اقدامات خطے کو عدم استحکام کا شکار ، امریکی مفادات، امریکی شخصیات ،تنصیبات کے تحفظ کے ہمارے عزم کو نقصان پہنچا رہے ہیں ،امریکہ عدم کشیدگی کے عزم پر قائم ہے ، ہمارے شراکت دار سب سمجھتے ہیں اور وہ اس سلسلے میں شش و پنج نہیں رہینگے،ایران کی کارروائیاں پورے خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کاذریعہ ہیں ، امریکہ اپنے لوگوں اور خطے میں اپنے مفادات کا ہر صورت تحفظ کرے گا ۔

جمعہ کو امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے ٹویٹ میں کہا کہ پاکستان کے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ٹیلی فونک گفتگو کی جس کے دوران انہیں امریکہ کے ایرانی کمانڈر جنرل قاسم سلیمانی کو ہلاک کرنے کے دفاعی اقدام کے بارے میں بتایا ۔مائیک پومپیو نے کہا کہ ایرانی حکمرانوں کے خطے میں اقدامات اسے عدم استحکام کا شکار کررہے ہیں اور یہ خطے میں امریکی مفادات، امریکی شخصیات ،تنصیبات کے تحفظ کے ہمارے عزم کو نقصان پہنچا رہا ہے اور ہمارے شراکت دار اسے برداشت نہیں کریں گے اور نہ ہی اس سلسلے میں شش و پنج نہیں رہینگے ۔

مائیک پومپیو نے کہا کہ انہوں نے اس حوالے سے افغانستان کے صدر اشرف غنی سے بھی ٹیلیفونک گفتگو کی اور انہیں امریکیوں کی جانوں کے تحفظ کےلئے ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو ہلاک کرنے کے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے فیصلے کے حوالے سے بتایا ۔انہوں نے کہا کہ امریکیوں کی جانیں داﺅ پر لگی ہوئی ہیں ۔پومپیو نے کہا کہ ایرانی حکمرانوں کی کارروائیاں پورے خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کی وجہ ہیں ۔انہوں نے کہا کہ امریکہ اپنے لوگوں اور خطے میں اپنے مفادات کا ہر صورت تحفظ کرے گا ۔مائیک پومپیو نے اپنے تیسرے ٹویٹ میں کہا کہ انہوں نے فرانس کے یاں یوویز لی دریان سے بھی صدر ٹرمپ کے قاسم سلیمانی کو ہلاک کرنے کےلئے کارروائی کے فیصلے سے آگاہ کیا ۔

انہوں نے کہا کہ ایرانی حکمرانوں کی بدنام کرنے کی کارروائیوں سے نمٹنا ہمارے یورپی اتحادیوں کے ساتھ تبادلے کی اولین ترجیح ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اپنے لوگوں اور مفادات کے تحفظ کےلئے ہمارا عزم غیر متزلزل ہے ۔ پومپیو نے کہا کہ انہوں نے جرمنی کے ہیکو ماس سے بھی گفتگو کی اور انہیں قاسم سلیمانی کو ختم کرنے کے صدر ٹرمپ کے دفاعی اقدام کے بارے میں اعتماد میں لیا ۔ امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ جرمنی کو بھی ایرانی حکمرانوں کی جانب سے مسلسل فوجی خلاف ورزیوں پر گہری تشویش ہے ۔انہوں نے کہا کہ امریکہ کشیدگی کے خاتمے کےلئے پرعزم ہے ۔

انہوں نے برطانوی وزیر برائے امور خارجہ ڈومینک راب سے بھی قاسم سلیمانی کو صفہ ہستی سے مٹانے کے امریکی صدر کے دفاعی اقدام کے بارے میں تبادلہ خیال کیا۔انہوں نے کہا میں اپنے اتحادیوں کا شکرگزار ہوں کہ وہ ایران کی قدس فورس کی جانب سے جاری جارحیت کے خطرات کو پہنچانتے اور سمجھتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ امریکہ ہمیشہ کشیدگی کے خاتمے کےلئے پرعزم رہا ہے ۔ پومیپو نے اپنے ٹویٹ میں چین کے پولیٹیکل بیورو کے رکن یانگ جی چی سے بھی اپنے رابطے اور امریکی کارروائی بارے اعتماد میں لینے کا تذکرہ کیا ۔


ای پیپر