فوٹو بشکریہ فیس بک

اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبہ مقررہ مدت میں مکمل ہونا چاہیے: چیف جسٹس
03 دسمبر 2018 (12:27) 2018-12-03

لاہور: چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ اورنج لائن ٹرین منصوبہ مکمل ہونے کی مدت پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔ پراجیکٹ کے انچارج کی مدت ملازمت میں توسیع ہوچکی ہے، منصوبہ مقررہ مدت میں مکمل ہونا چاہیے۔

چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے سے متعلق کیس کی سماعت کی تو وکیل شاہد حامد نے عدالت سے استدعا کی کہ سپریم کورٹ کے کسی ریٹائرڈ جج یا چیف جسٹس کو ثالث بنا دیا جائے۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ آپ اس حوالے سے ٹی او آرز آج ہی بنا لیں تاکہ ثالث کو بھجوائے جا سکیں۔

دوسری جانب نجی کمپنی کے وکیل نعیم بخاری نے کہا کہ ہم اپنا کام وقت پر مکمل کرنا چاہتے ہیں۔ ایل ڈی اے سات ماہ سے ہمارے واجبات ادا نہیں کر رہا، وہ سمجھ رہے ہیں چیف جسٹس کے ریٹائر ہونے پر معاملہ دب جائے گا۔ جس پر ایل ڈی اے حکام نے کہا کہ پیسوں کی منظوری نیسپاک نے دینی ہے، جبکہ نیسپاک حکام نے کہا کہ تعمیرات میں کچھ تنازعہ ہے۔ طے شدہ نرخوں میں کچھ کمپنیوں کی جانب سے تبدیلی کی گئی ہے۔ جس پر کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کیلئے ملتوی کر دی گئی۔


ای پیپر