موبائل کی اہمیت……
02 اکتوبر 2020 (14:11) 2020-10-02

دوستو، کالم شروع کرنے سے پہلے ایک واقعہ سن لیں، ہمارے ایک دوست نے ایک روز ہم سے پوچھا، کیا زندہ رہنے کے لئے ”پیار“ بہت ضروری ہے، جس پر ہم نے فوری جواب دیا تھا کہ، نہیں۔۔زندہ رہنے کے لئے آکسیجن کی لازمی ضرورت ہوتی ہے۔۔ایک منٹ کے لئے بھی آکسیجن کی سپلائی رک جائے تو دل،دماغ سب کچھ کام کرنا چھوڑ دیتے ہیں اور انسان مرجاتا ہے۔۔لیکن اگر موجودہ نوجوان نسل سے یہی سوال کیا جائے تو ان کا فوری جواب ہوگا۔۔ موبائل فون۔۔ جس کے بغیر ان کا ایک ایک سیکنڈ ایک ایک صدی بن جاتا ہے۔۔تو پیارے احباب سمجھ ہی گئے ہوں گے کہ آج موبائل فون کے حوالے سے کچھ اوٹ پٹانگ باتیں کی جائیں گے۔ جس کے بغیر نوجوانوں کو ایک پل چین نہیں آتا۔۔عہدمشرف گزرے ابھی زیادہ عرصہ نہیں گزرا،وہ اور ان کے شارٹ کٹ وزیراعظم شوکت عزیز سمیت سب اس پر اترایاکرتے تھے کہ سولہ کروڑ میں سے چھ کروڑ سے زائد لوگ موبائل فون استعمال کرتے ہیں، یعنی وہ سب ترقی کا پیمانہ موبائل فون کے استعمال کو قرار دیتے تھے حالانکہ اگر دیکھاجاتا تو، موبائل فون چھ کروڑ لوگوں کے پاس ضرور تھے مگر بیلنس کسی کے پاس نہیں ہوتا تھا۔۔

موبائل فونز پر روایتی اوٹ پٹانگ باتوں سے قبل پہلے اس حوالے سے ایک تازہ تحقیق بھی سن لیں۔۔۔ دنیا کے ممتاز ماہرینِ جلد نے خبردار کیا ہے کہ موبائل فون کا حد سے زائد استعمال آپ کو بوڑھا اورچہرے کو بد نما بھی بنا سکتا ہے۔ڈاکٹروں کے مطابق موبائل فون جھکی ہوئی گردن، آنکھوں کی تھکاوٹ اور چہرے کے داغ دھبوں کی وجہ بن سکتا ہے۔ ماہرین کے مطابق لوگ روزانہ درجنوں مرتبہ اپنے فون کو دیکھتے ہیں جس کے مضر اثرات چہرے کو بدنما بناسکتے ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ خواہ ٹیکسٹ پڑھنا ہو، اسکرولنگ ہو یا بات کرنی ہو، سیل فون رکھنے والے خواتین و حضرات دن میں 85 سے 90 مرتبہ اپنے فون کو دیکھتے ہیں جس سے جبڑے لٹکنے کے ساتھ ساتھ کیل مہاسوں کی شکایت بھی ہوسکتی ہے۔ موبائل فون کو مسلسل تکنے کی وجہ سے آنکھوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے، ہم میں سے تمام لوگ یہ جانتے ہیں کہ کرسی پر بیٹھے بیٹھے دیر تک کمپیوٹر کو تکتے رہنے سے بصارت کو نقصان پہنچتا ہے اسی لیے بار بار کہا جاتا ہے کہ کچھ وقت کے لیے کمپیوٹر سے نگاہ ہٹا کر دور دیکھا جائے تاکہ اس نقصان کا ازالہ کیا جاسکے۔

ایک سردار جی اپنا موبائل فون ”وٹے“ سے توڑ رہے تھے، کسی نے فون توڑنے کی وجہ پوچھی تو کہنے لگے، میں اپنے دوست کو فون کررہا تھا تو اندر سے عورت بولنے لگی،کچھ دیر بعد فون کریں۔۔اب میں یہ دیکھ رہا ہوں کہ وہ عورت اتنے چھوٹے سے فون میں گھسی کیسے۔۔؟ ایک صاحب اپنے دوست سے شکوہ کررہے تھے کہ،یار یہ موبائل مجھے کنگال کردے گا، دوست نے وجہ پوچھی تو کہنے لگے۔۔ موبائل فون بار بار بولتا ہے، بیٹری لو،بیٹری لو۔۔ اسی چکر میں اب تک 50 بیٹریاں لے چکا ہوں۔۔۔ہمارے پیارے دوست شکوہ کررہے تھے کہ۔۔یارقسم سے اس وقت خودکشی کرنے کا دل چاہتا ہے جب میرے بہن بھائی میرا دس فیصد بیٹری رہ جانے والا فون چارجنگ سے نکال کر اپنا نوے فیصد بیٹری والا فون لگادیتے ہیں۔۔باباجی فرماتے ہیں کہ اللہ نے کھوپڑی سوچنے کے لئے دی تھی ہم اسے اخروٹ توڑنے کے کام میں لگارہے ہیں۔۔باباجی مزید فرماتے ہیں کہ پہلے نوجوان بزرگوں کی بات سننے کے لئے احترام میں کھڑے ہوجاتے ہیں اب ہینڈفری صرف ایک کان سے نکال دیتے ہیں۔۔

ہمارے پیارے دوست نے ہمیں واٹس ایپ پر موبائل کے حوالے سے ایک میسیج بھیجا، وہ لکھتے ہیں کہ۔۔ دنیا کے پہلے موبائل کا بنیادی کام صرف کال کرنا تھا، اور موبائل کی اس پہلی نسل کو 1G یعنی فرسٹ جنریشن کا نام دیا گیا۔ اور اس موبائل میں کال کرنے اور سننے کے سوا کوئی دوسرا آپشن نہیں ہوتا تھا۔پھر جب موبائلز میں sms یعنی میسج کا آپشن ایڈ ہوا، تو اسے 2G یعنی سیکنڈ جنریشن کا نام دیا گیا۔پھر جس دور میں موبائلز کے ذریعے تصاویر بھیجنے کی صلاحیت بھی حاصل کر لی گئی تواس ایج کے موبائلز کو 3G یعنی تھرڈ جنریشن کا نام دیا گیا۔اور جب بذریعہ انٹرنیٹ متحرک فلمز اور موویز بھیجنے کی صلاحیت بھی حاصل کر لی گئی تو اس ایج کے موبائلز کو 4G یعنی فورتھ جنریشن کا نام دیا گیا۔۔اور ابھی جب موبائلز کی دنیا 5G کی طرف بڑھ رہی تو اس وقت تک دنیا کی ہر چیز کو موبائل میں شفٹ کر دیا گیا ہے۔ آج دنیا کا شاید ہی کوئی ایسا کام ہو گا جو موبائل سے نہ لیا جا رہا ہو۔ مگر حیرت ہے کہ اتنی ترقی کرنے اور نت نئے مراحل سے گزرنے کے باوجود یہ موبائل آج بھی اپنا بنیادی کام نہیں بھولا۔ آپ کوئی گیم کھیل رہے ہوں یا فلم دیکھ رہے ہوں، انٹرنیٹ سرچنگ کر رہے ہوں یا وڈیو بنا رہے ہوں۔۔ الغرض موبائل پر ایک وقت میں دس کام بھی کر رہے ہوں۔۔ لیکن جیسے ہی کوئی کال آئے گی موبائل فوراً سے پہلے سب کچھ چھوڑ کر آپ کو بتاتا ہے کہ کال آرہی ہے یہ سن لیں۔ اور وہ اپنے اصل اور بنیادی کام کی خاطر باقی سارے کام ایک دم روک لیتا ہے۔۔۔اور ایک انسان جسے اللہ نے اپنی عبادت کے لیے پیدا فرمایا اور ساری کائنات کو اس کی خدمت کے لیے سجا دیا، وہ اللہ کی کال پر دن میں کتنی بار اپنے کام روک کر مسجد جاتا ہے؟مسجد جانا تو درکنار اب اللہ کی کال یعنی اذان پر ہم اپنی گفتگو بھی روکنا مناسب نہیں سمجھتے۔ عبادت ہر انسان اور نماز ہر مسلمان کی زندگی کا بنیادی جز ہے جس کی موت تک کسی صورت میں بھی معافی نہیں۔ کاش ہم موبائل سے اتنا سا ہی سبق سیکھ لیں جسے ہم نے خود ایجاد کیا اور ایک لمحہ بھی خود سے جدا نہیں کرتے کہ دنیا کے سب ہی کام کرو مگر اپنی پیدائش کا بنیادی مقصد اللہ کی عبادت کبھی نہ بھولو۔ اذان ہوتے ہی سب کچھ روک کر مسجد چلو اور اللہ کی کال پر لبیک کہو۔

اور اب چلتے چلتے آخری بات۔۔ پڑھتے اور سنتے ہم بھلے شاہ کو وارث شاہ کو، لیکن کام ہمارے ڈبل شاہ والے ہیں۔۔خوش رہیں اور خوشیاں بانٹیں۔۔


ای پیپر