بھارتی فورسز کی لائن آف کنٹرول پر سیز فائر کی 2404خلاف ورزیاں ،19 معصوم شہری شہید،192شدید زخمی
02 اکتوبر 2020 (10:12) 2020-10-02

 اسلام آباد: بھارتی قابض فورسز کی لائن آف کنٹرول پر سیز فائر کی سنگین خلاف ورزیوں پر پاکستان نے بھارتی ہائی کمیشن کے سینئر سفارتکار کو دفتر خارجہ طلب کر کے احتجاجی مراسلہ تھما دیااور کہاہے کہ رواں برس بھارت نے ابتک فائر بندی انتظام کی 2404 خلاف ورزیاں کیں، جن میں 19 معصوم شہری شہید اور 192 شدید زخمی ہوئے۔

جمعرات کو ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق پاکستان میں بھارتی ہائی کمیشن کے سینئر سفارتکار کو دفتر خارجہ طلب کر کہ احتجاجی مراسلہ تھما دیا گیا جس میں پاکستان نے بھارت سے اشتعال انگیزیوں پر شدید احتجاج کیا ہے،دفتر خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ چوہدری کے مطابق بھارتی قابض افواج نے30 ستمبر کو ایل او سی کے جندروٹ سیکٹر میں بلااشتعال فائرنگ کی جس سے ایک نہتی بزرگ خاتون شدید زخمی ہوا جس کی شناخت کٹھر گاﺅں کی 65 سالہ کلثوم بیگم بیوہ منڈی خان کے طور پر ہوئی۔

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق رواں برس بھارت نے ابتک فائر بندی انتظام کی 2404 خلاف ورزیاں کیں، جن میں 19 معصوم شہری شہید اور 192 شدید زخمی ہوئے ۔دفتر خارجہ نے کہا کہ بھارت کا معصوم شہریوں کو جان بوجھ کر نشانہ بنانا قابل مذمت ہے ، بھارتی فورسز مسلسل لائن آف کنٹرول، ورکنگ باﺅنڈری پر شہری آبادی کو نشانہ بنا رہی ہیں، بھارت کی پے در پے اشتعال انگیزیاں خطے میں امن و سلامتی کےلئے خطرہ ہیں ،بھارت ان حرکتوں سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے دنیا کی توجہ نہیں ہٹا سکتا ۔

ترجمان کے مطابق بھارت اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عمل درآمد یقینی بنائے اور 2003ءکے جنگ بندی انتظامات کی پاسداری کرے۔ترجمان نے کہا کہ ہندوستان کا نہتے شہریوں کو نشانہ بنانا عالمی قوانین، اقدار کے منافی ہے،بھارت اقوام متحدہ کے فوجی مبصرین کو ایل او سی پر آزادانہ کام کرنے کی اجازت دے۔


ای پیپر