Corrupt officers, Food department, water, soil, wheat, government, warehouses
02 فروری 2021 (14:11) 2021-02-02

لاہور: (محمد اشرف مہتاب) محکمہ خوراک پنجاب کی نا اہلی ثابت ہو گئی۔ سرکاری گوداموں میں گندم میں مٹی اور ضرورت سے زائد پانی ملا کر وزن بڑھایا جانے لگا جس سے ملاوٹ زدہ آٹے سے پیٹ اور معدے کی بیماریاں پیدا ہونے لگیں مگر راشی افسر اور ملازم ہیں کہ مکرو دھندہ کو روکنے کی بجائے فروغ دے رہے ہیں۔

اس ضمن میں چند روز قبل ڈی سی مظفر گڑھ نے چھاپہ مار کر گندم میں مٹی ملانے والے چار ملازم کو گرفتار کرا دیا۔ گندم میں مٹی اور ضرورت سے زیادہ نمی بڑھانے کی وجہ سے روزانہ ڈھائی کروڑ سے 15 کروڑ روپے کا مکروہ دھندہ کیا جا رہا ہے۔ پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن کے چیئرمین عاصم رضا نے احتجاج کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے اگر یہ کام نہ روکا تو پھر وہ احتجاج کرنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

ذرائع کے مطابق پنجاب کے سرکاری گوداموں میں پڑی گندم میں سے کچھ کو مبینہ طور پر مارکیٹ میں مہنگے داموں فروخت کرنے کے بعد گندم کا وزن پورا کرنے کے لیے اس میں مٹی اور ضرورت سے زیادہ پانی ملا دیا جاتا ہے جس سے گندم ملاوٹ زدہ ہو جاتی ہے اور اس سے تیار ہونے والا آٹا فنگس زدہ ہونے کی وجہ سے استعمال کرنے والوں کے لیے پیٹ اور معدے سمیت مختلف بیماریوں کا باعث بننے لگا ہے۔

واضح رہے کہ پنجاب میں فلور ملز کو روزانہ 25000 ٹن گندم جاری کی جاتی ہے اور اگر اس میں ضرورت سے زیادہ نمی ڈال دی جائے اور ساتھ مٹی بھی تو ہر بوری پر 100 روپے یا اس سے زائد کا فائدہ ہوتا ہے۔ محکمہ خوراک کے راشی افسر اور ملازمین روزانہ اس مکرو دھندے کو جاری رکھ کر ڈھائی کروڑ سے 15 کروڑ روپے کما رہے ہیں۔ شہریں نے بھی اس پر احتجاج کی دھمکی دی ہے اور کہا ہے کہ ایک طرف حکومت غریب آدمی کو سستا آٹا فراہم کرنے کے دعوے کر رہے ہے تو دوسری طرف یہی سستا آٹا ان کی صحت کے لیے مضر ثابت ہو رہا ہے۔

شہریوں نے کہا ہے کہ تبدیلی سرکاری نے تو کہا تھا کہ 90 دن میں سرکاری اداروں میں کرپشن ختم ہو جائے گی مگر ایسا لگتا ہے کہ محکمہ خوراک اس پیغام سے اپنے آپ کو بری سمجھ رہی ہے۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ فنگس زدہ گندم کا آٹا کھانے سے پہلے پیٹ اور معدے کی بیماریاں پیدا ہوتی ہیں اور اگر پھر بھی اس آٹے سے چھٹکارا حاصل نہ کیا گیا تو یہی بیماریاں بعد میں کنسر کا سبب بن سکتیں ہیں۔ پاکستان فلورز ملز ایسوسی ایشن نے سرکاری گندم میں ملاوٹ کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملاوٹ زدہ گندم سرکار فراہم کرتی ہے اور لوگ فلور ملز کو کوستے ہیں کہ وہ آٹے میں ملاوٹ کر کے لوگوں کو بیمار کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ سرکاری گوداموں سے یہ سلسلہ نہ روکا گیا تو ملک بھر کی فلور ملز احتجاج کرنے پر مجبور ہو جائیں گی۔


ای پیپر