ٹرمپ اور یوکرائن کے صدر میں مشکوک گفتگو نے ہلچل مچا دی
01 اکتوبر 2019 (17:13) 2019-10-01

واشنگٹن: صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور یوکرائن صدر کے درمیان مشکوک گفتگو اور اس پر وائٹ ہائوس کے اہلکار کے مستعفی ہونے کی خبر نے امریکا میں تہلکہ مچا دیا ہے اور اس سارے قضیے میں جو سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہ خبر کسی اور نے نہیں بلکہ امریکہ کے ایک انٹرن صحافی نے بریک کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایریزونا اسٹیٹ یونیورسٹی کا 20 سالہ طالب علم اور اسٹوڈینٹس میگزین کا ایڈیٹر اینڈریو ہووارڈ علاقائی اخبار میں بطور انٹرنی کام کر رہا ہے۔طالب علم اینڈریو ہووارڈ نے 27 ستمبر کی شام ہی مصدقہ اطلاعات کی بنیاد پر نیوز بریک کی کہ وائٹ ہاوس کے مستعفی ہونے والے اہلکار کا نام کرٹ ڈی وولکر ہے اور وہ یوکرائن کے لیے امریکی صدر کے خصوصی مشیر کے منصب پر فائز تھے۔

اینڈریو ہووارڈ کی خبر نے امریکا میں تہلکہ مچا دیا ہے اور میڈیا سے تعلق رکھنے والے افراد اس خبر پر ششدر رہ گئے ہیں۔ نہایت حساس ملکی معاملہ قرار دیکر وائٹ ہاوس نے ہر ممکن طریقے سے اسے چھپانے کی کوشش بھی کی تھی لیکن 20 سالہ طالب علم سے ہار گئے۔یا د رہے کہ امریکی صدر اور یوکرائنی صدر کے درمیان ہونے والی مشکوک گفتگو پر وائٹ ہاوس کے ایک اہم عہدے پر فائز اہلکار نے نہ صرف استعفی دے دیا بلکہ مشکوک گفتگو سے متعلق ایک باقاعدہ شکایت انسپکٹر جنرل کو درج بھی کرائی۔


ای پیپر