Supreme Court, good opinion, Senate elections, Attorney General, Khalid Jawed Khan
01 مارچ 2021 (12:00) 2021-03-01

اسلام آباد: اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ نے سینیٹ انتخابات کے حوالے سے اچھی رائے دی ہے۔

خالد جاوید خان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ سپریم کورٹ نے اپنی رائے میں ہارس ٹریڈنگ اور کرپٹ پریکٹس کو روکنے کیلئے ہمارے موقف کی تائید کی ہے ، ہم بھی صاف اور شفاف الیکشن چاہتے تھے اور سپریم کورٹ نے بھی یہی کہا ہے ۔

اٹارنی جنرل نے کہا کہ ووٹ کی رازداری سے متعلق سپریم کورٹ نے ہمارا مؤقف تسلیم کیا ، سپریم کورٹ نے کہا ووٹ کی رازداری ہمیشہ کیلئے نہیں ، معزز جج صاحبان نے ووٹ کی شناخت کو ممکن بنانے کی رائے دی ہے ۔

انہوں نے مزید کہا ہے کہ سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن کو جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کا بھی حکم دیا ہے ۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے صدارتی ریفرنس پر رائے دیتے ہوئے کہا ہے کہ سینیٹ الیکشن آئین کے مطابق خفیہ رائے شماری پر ہی ہوں گے ۔ چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں 5 رکنی بنچ میں شامل جسٹس یحییٰ آفریدی نے اکثریتی فیصلے سے اختلاف کیا ۔

وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز نے کہا کہ آج وزیر اعظم عمران خان کے مؤقف کی جیت ہوئی ، انہوں نے سینیٹ الیکشن میں شفافیت کیلئے ٹیکنالوجی کے استعمال کا مطالبہ کر دیا ۔

شبلی فراز نے سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں ہر قسم کے وسائل ہیں لیکن کرپشن کے باعث ترقی نہیں کر رہا ۔ پیسے کے زور پر آنے والے ذاتی مفادات کو ترجیح دیتے ہیں۔

فواد چودھری نے ٹوئٹ میں کہا کہ سپریم کورٹ نے مکمل خفیہ رائے دہی کا اصول نہیں مانا بلکہ الیکشن کمیشن کو کہا گیا ہے کہ وہ شفاف انتخابات کیلئے اقدامات کرے جس میں ٹریس ایبل بیلٹ شامل ہے ۔


ای پیپر