Saudi Arabia, Mohammed bin Salman, Israeli aircraft, airspace, Benjamin Netanyahu
01 دسمبر 2020 (13:48) 2020-12-01

ریاض: سعودی عرب نے متحدہ عرب امارات جانے کے لیے اسرائیلی طیاروں کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دے دی۔

اسرائیلی میڈیا کے مطابق سعودی عرب کی جانب سے اسرائیلی پروازوں کو فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت ایسے وقت میں دی گئی ہے جب اسرائیل کی پہلی پرواز متحدہ عرب امارات کے لیے اڑان بھرنے کی تیاریاں کر رہی ہے۔ اس اجازت کے تحت اسرائیل کو ہفتے میں 4 دن کے لیے سعودی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت ہوگی۔

دوسری جانب سعودی عرب کی طرف سے فی الحال خبر کی تصدیق نہیں کی گئی ہے، اگر سعودی عرب کی جانب سے فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جاتی تو اسرائیلی ایئر لائن کو متحدہ عرب امارات جانے کے لیے لمبا راستہ طے کرنا پڑتا جو کہ تین گھنٹے سے بڑھ کر آٹھ گھنٹوں تک پہنچ جانا تھا۔

واضح رہے کہ سعودی عرب اور اسرائیل کے درمیان خفیہ ملاقاتوں کا سلسلہ جاری ہے۔ اسرائیل کے وزیر اعظم نیتن یاہو نے محمد بن سلمان سے ملاقات کی تھی جس میں دونوں رہنماوں نے امن معاہدے، سفارتی اور تجارتی تعلقات قائم کرنے پر بات چیت کی تھی۔ اس ملاقات میں امریکا کے اعلیٰ حکام بھی موجود تھے۔

ادھر سعودی وزیر خارجہ نے محمد بن سلمان اور نیتن یاہو کی ملاقات کی تردید کی تھی، لیکن انٹرنیشنل میڈیا کا کہنا تھا کہ یہ ملاقات ہوئی تھی لیکن اس میں اسرائیل کو کامیابی نہیں مل سکی کیونکہ سعودی ولی عہد اسرائیل کو تسلیم کرنے سے ہچکچا رہے تھے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق سعودی عرب چاہتا ہے کہ وہ پاکستان کے بعد اسرائیل کے ساتھ تعلقات استوار کرے۔ اس لیے مملکت کی جانب سے پاکستان پر دباو ڈالا جا رہا ہے کہ وہ اسرائیل کو تسلیم کرے اور خود وزیراعظم عمران خان بھی اس بات کا اعتراف کر چکے ہیں کہ پاکستان اس حوالے سے شدید دباو میں ہے۔


ای پیپر